خدا نہ کرے کہ بھول جائے کوئی

کسی کو بھول جانا بے اعتنائی اور بے وفائی سمجھی جاتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہمارے شاعروں نے اسے اپنا موضوع سخن بنایاہے۔ قتیل شفائی نے اپنے محبوب کو یقین دلاتے ہوئے کہا کہ میں تجھ کو بھول کے زندہ رہوں خدا نہ کرے جبکہ ساغر صدیقی کہتے ہیں کہ :
تیری صورت جو اتفاق سے ہم
بھول جائیں تو کیا تماشا ہو

یہ تو ایک شاعرانہ تخیل اور دلی کیفیت کی بات ہے لیکن کبھی ایسا ہو سکتا ہے



image

 

THIS ARTICLE WAS PUBLISHED IN;

http://dailyausaf.com/columns/2016-12-14/9856

http://www.picss.se/urdu/archives/776

http://www.karwan.no/discussion/38177/2016-11-27/alzheimer/

https://goo.gl/rABl3H

http://bolinternational.net/archives/146959

http://www.gujratlink.com/overseas/news/detail/2016-11-28(10).gif

http://rehbar.in/27112016/newsdetails.asp?parentid=74066052&boxid=815233&linkid=203761&pageNum=4

http://daily.urdupoint.com/columns/detail/all/arif-mahmud-kisana-524/khuda-na-kare-k-bhool-ho-jaye-23472.html

http://www.dailykashmirexpress.com/admin/akhbar/26-11-2016-P6.gif

http://dailydastak.com/overseas2016/nov/453.php

http://dailypegham.com/ur/?p=15277

http://urdunetjpn.com/ur/2016/11/29/dr-arif-kisana-from-sweden-16/

http://www.sapulse.com/new_comments.php?id=14824_0_1_0_C

http://universalurdupost.com/selective-column/28-11-2016/43079

http://www.urdukhabrain.com/?p=12109&lang=ur

http://watannews.dk/news/Magzine/Dec%202016.pdf page 39

28 Nov 2016


Afkare Taza: Urdu Columns and Articles (Urdu Edition)