عورت کا اصل مسئلہ

یہ کیسا معائدہ ہے کہ جو دو فریقین باہمی رضا مندی سے کرتے ہیں لیکن جونہی معائدہ پر دستخط ہوتے ہیں ایک حاکم بن جاتا ہے اور دوسرے کی حیثیت محکوم کی ہوجاتی ہے حالانکہ معائدہ میں ایسی کوئی شرط موجود ہوتی ہی نہیں ۔ ہمارے سماج میں بالکل ایسا ہی ہوتا ہے اور نکاح کے بعد بیوی محکوم اور خاوند حاکم اور مجازی خدا بن جاتا ہے جو بعض اوقات مجازکے سابقہ کو بھی اتار پھینکتا ہے۔بد قسمتی سے ہماری سماجی اور مروجہ مذہبی تشریحات ان رویوں کی تائید میں یک جان ہیں حالانکہ اسلام کی تعلیمات اس کے برعکس ہیں۔ قرآن حکیم نکاح کو ایک معائدہ قرار دیاہے (۲۱؍۴) اور مرد کی عورت کو بھی اپنے جیون ساتھی کے انتخاب کا پورا حق دیتا ہے (۱۹؍۴)۔قرآن نکاح کے موقع پر لڑکی کو کچھ (مہر) دینے کا حکم دیتا ہے نہ کہ لینے کا ، جو ہمارے ہاں جہیز کی صورت میں ہوتا ہے۔ کتنی لڑکیاں ہیں جن کے والدین جہیز کا مطالبہ پورا نہیں کرسکتے اور وہ بیچاری ایسے ہی بیٹھی رہتی ہیں۔ میاں بیوی کے حقوق ق فرائض کی تعلیمات دیتے ہوئے قرآن حکیم نے اس رشتہ کو حاکم اور محکوم کا رشتہ نہیں کہا بلکہ اسے سکون، رحمت اور محبت کا تعلق قرار دیا ہے(۲۱؍۳۰)۔ مردوں پر معاشی ذمہ داری ڈالتے ہوئے انہیں ذمہ داری سونپی ہے جس کا معانی حاکم نہیں ہے جسے بعض سورہ نساء کی آیت ۳۴ الرجال قومون النساء سے مطلب اخذکرتے ہیں۔اسی آیت میں قرآن حکیم اس حقیقت کا بھی اعلان کرتا ہے کہ کچھ خوبیاں مردوں میں میں اور کچھ عورتوں میں اور پھر عورتوں کو مردوں کا ہمدوش قرار دیتے ہوئے اُن تمام صلاحیتوں اور خوبیوں کی تفصیل الگ الگ کرکے بیان کردیتا ہے کہ جو خوبیاں مردوں میں ہیں وہی عورتوں میں بھی موجود ہیں(۳۵؍۳۳)۔ قرآن یہ بھی کہتا ہے کہ جس قدر عورتوں کی ذمہ داریاں ہیں اسی قدر ان کے حقوق ہیں( ۲۲۸؍۲ )۔ جب قرآن حکیم یہ کہتا کہ تمام بنی نوع آدم قابل عزت ہیں (۷۰؍۱۷) تو اُس میں مر اور عورتیں دونوں شامل ہیں۔ مردوں کو یہ تاکید کہ عورتوں سے حسن سلوک سے پیش آؤ اور اگر اکوئی بات ناگوار بھی گذرے تو تحمل سے کام لو (۱۹؍۴) جس کی وضاحت آقاﷺ نے یوں کی کہ اگر اپنی عورت کی کوئی بات اچھی نہیں لگتی تو اسے نظر انداز کرکے اُس کی اچھی بات کو مد نظر رکھو۔ عورت کی اللہ نے یوں عزت افرائی کہ قرآن حکیم کی ایک بڑی سورۃ کا نام النساء رکھ دیا۔ 

عورت کی ہمارے معاشرہ میں بہت عزت ہے صرف اس وقت جب وہ ماں، بیٹی یا بہن ہوتی ہے لیکن جب یہی عورت بیوی کے رشتہ میں ہوتی ہے تو وہاں صورت حال مختلف ہوجاتی ہے۔ حالانکہ آقاؐ نے بار بار تاکید اور اپنے آخری خطبہ میں بھی یہی کہا کہ عورتوں سے حسن سلوک سے پیش آؤ اور اس معاملہ میں اللہ سے ڈرو۔ انسان کی تخلیق کا ذکر کرتے ہوئے قرآن حکیم نسبی اور سسرالی دونوں رشتوں کا بتایا ہے اور دونوں کو اہمیت دی ہے (۵۴؍۲۵)۔ مگر ہمارے معاشرے کا چلن دیکھیے سسرال کے تمام رشتوں کو گالی بنا دیا گیا ہے یہاں تک کہ ماموں کے رشتہ کوبھی گالی کے لیے بولا جاتا ہے ۔ ہمارے جو لوگ بیٹیوں کی پیدائش پر افسردہ ہوتے ہیں وہ ہمارے سفاک سماجی ریوں کی وجہ سے پریشان ہوتے ہیں کیونکہ انہیں بیٹی کے والدین کی حیثیت سے پوری عمر اسے بھگتنا ہے۔ داماد اور بیٹی کے سسرال والے جو مرضی کہیں اور کریں بیٹی والوں کاکام برداشت کیے جانا ہے۔ ہندو معاشرہ کے اثرت ابھی بھی ہمارے اندر رچ بس گئے ہیں جہاں بیٹی والے ہمیشہ دبے اور جھکے رہتے ہیں۔ معاشی استحصال کی داستان جہیز سے شروع ہوتی ہے جو پوری عمر جاری رہتی ہے یہاں تک کہ خدانخواستہ اگر دامادکا انتقال ہوجائے تو تجہیزو تکفین سے لیکر مہمانوں کے کھانے کا بھی لڑکی والوں کو انتظام کرنا پڑتا ہے۔ بیٹیوں کا استحصال بعض اوقات خود اُن کے والدین بھی کرتے ہیں جب وہ بہت سے امور میں بیٹوں کو بیٹیوں پر ترجیح دیتے ہیں۔ خرابی یہیں سے شروع ہوتی ہے جب مرد کو یہ احساس دلایا جاتا ہے کہ اس کی اہمیت عورت سے زیادہ ہے۔ اسی رویہ کے باعث مرد عورت کو اپنی طرح کا انسان نہیں سمجھتا اور شادی بعد وہ عورت کو بچے پیدا کرنے ، کھانا پکانے اور خدمت گذاری کا ذریعہ سمجھتا ہے اور خود جو چاہے مرضی کرے ۔اس کے ساتھ جیسا مرضی سلوک کرے اور چاہے تو تین لفظ بول کر اسے بے گھر کردے ۔عورت کا تو کوئی گھر نہیں اور نہ کوئی عورت کی فریاد سننے والا اور نہ کوئی اس کا مداوا۔ اگر کوئی خاوند اچھا سلوک کربھی لے تو بڑا احسان جتائے گا اور وہ ایسا کرے کیوں نہ جب اسے بچپن سے تربیت ہی ایسی دی گئی ہے۔ اگر کوئی عورت اپنا حق لینا چاہے تو معاشرہ اور رشتہ دار اسے بُرا سمجھیں گے۔ مرد کے لیے مجازی خدا اصطلاح ہی غلط، غیر انسانی اور غیر اسلامی ہے۔ غیرت صرف عورت کے لیے ہی کیوں ؟ مرد کے معاملہ میں غیرت کیوں نہیں۔ اگر لڑکی کوئی جرم کرلے تو وہ گردن زنی کے قابل لیکن اگر وہی جرم لڑکا کرے تو خاموشی۔ 

عورت کے ساتھ یہ رویہ رکھنے والے مسلمان ہونے کے دعوی دار ہیں جن کے رسولؐ پاک نے فرمایا کہ عورتوں کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آؤ۔ حضرت عائشہؓ سے روایت ہے آپ نے فرمایا کہ وہ آدمی تم میں سے زیادہ اچھا اور بھلا ہے جو اپنی بیوی کے حق میں اچھا ہے اور فرمایا کہ میں اپنی بیویوں کے لئے بہت اچھا ہوں۔ آپؓ نے کبھی اپنی کسی بیوی کو نہ گالی دی اور نہ ہی اُس پر ہاتھ اٹھایا۔ اپنے آخری خطبہ میں امت کو تاکید کہ عورتوں کے ساتھ اچھا برتاؤ کرنے کے پابند رہواور اس معاملہ میں اللہ سے ڈرتے رہو۔ تم نے ان کو اللہ کی امانت کے طور پر حاصل کیا ہے اور اللہ کے کلمات کیذریعے ان کو اپنے لیے جائز و حلال کیا ہے۔ بیوی اور اولا د کو قرآن حکیم نے آنکھوں کی ٹھنڈک قرار دیا (۷۴؍۲۵) ۔ عورت کو دنیا میں سب سے پہلے یہ عظیم مقام اور مرتبہ دینے والے نبی رحمتؐ کے ساتھ بد قسمتی سے ایسی رویات جن میں عورتوں کو کم تر، منحوس،کم عقل اور اسی طرح کی اور باتیں منسوب کردی گئیں جو واضع طور پر وضعی اور من گھڑت ہیں۔ یہ بھی کہا جاتا ہے اللہ کے منع کرنے کے باوجود آدم ؑ نے حوا کے کہنے پر ہی وہ شجر ممنوع کے پاس گئے اور پھل کھایا جس کی قرآن حکیم نے کھلے الفاظ میں تردید کردی اور کہا کہ وہ دونوں اس کے ذمہ دار تھے (۳۶؍۲)۔ مغربی معاشرہ نے عورت کو آزادی تو دی لیکن اسے مقام انسانیت نہیں دیا ۔ یورپ ، امریکہ اور دیگر ممالک جو عورتوں کے حقوق کے دعوی دار ہیں انہیں نے بھی عورت کو اس کا اصل مقام نہیں دیا۔ عورت کو یہ ذہن نشین کرایا کہ تم مقصود بالذات نہیں ہو بلکہ تم مرد کی تفریح اور تسکین کے لیے پیدا کی گئی ہو اسی لیے عورت کو اشتہار بنا دیا گیا ہے۔ عورت کی حیثیت ایک Commodity اور ایک پر کشش چیز کی بنا دی گئی ہے اور وہ مردوں میں جاذب نظر بننے کے لیے ہر طرح کے جتن کرتی ہے یعنی اسکی اپنی کوئی ذات ہی نہیں۔ مشرق میں عورت کا استحصال جبر کے ساتھ اور مغرب میں مکر کے ساتھ ہورہا ہے۔ سویڈن اور بہت سے اور یورپی ممالک میں عورتوں کی تنخواہ مردوں کی نسبت کم ہے۔ خواتین کے حقوق کے علمبردار ملک سویڈن میں آج تک کوئی عورت وزیر اعظم نہیں بن سکی۔ لیکن اس کے ساتھ یہ بھی حقیقت ہے کہ یورپ میں اکیلی عورت اپنی زندگی اپنی مرضی سے بسر کرسکتی ہے ، ملازمت اور سفر بغیر کسی خدشہ کے کرسکتی ہے لیکن مشرقی معاشرہ میں یہ ممکن نہیں اور اس کی وجہ مردوں کا رویہ ہے۔ عورت کا اصل مسئلہ ہی مردوں کا رویہ اور جبر و تسلط ہے اور یہ تب ہی دور ہوگا جب بچپن سے ہی ہم اپنے بچوں کو عورت کی عزت کرنا سکھائیں گے اور انہیں یہ باور کرائیں گے کہ وہ بھی انسان ہے۔ تصویر کا دوسرا پہلو بھی ہے کہ جب عورت کو موقع ملتا ہے تو بھی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتی۔ساس بھی تو عورت ہی ہوتی ہے جو اپنی بہو کے ساتھ زیادتی کرتی ہے۔اور بہوبھی عورت ہی ہے کہ بہت سے سسرال والوں کو دن میں تارے دیکھا دیتی ہے۔عورت کو بھی چاہیے کہ وہ بھی اپنی حیثیت کا ناجائیز فائدہ نہ اٹھائے اور گھر وہی جنت کا نمونہ ہوتا ہے جس میں سب اپنے حقوق و فرائض کو پورا کریں اور حد سے نہ بڑھیں۔ 

7 Mar 2015

Comments powered by Disqus

Afkare Taza: Urdu Columns and Articles (Urdu Edition)

This website was built using N.nu - try it yourself for free.(info & kontakt)