اسلام ، مذہبی آزادی اور احترامِ مذاہب

 

  دین اللہ کے نزدیک صرف اسلام ہی ہے جس کی قرآنِ حکیم نے سورہ آل عمران کی آیت انیس میں وضاحت کی ہے۔ یہاں یہ حقیقت بھی  بیان کی ہے کہ یہ دین یعنی نظامِ زندگی اور ضابطۂ حیات ہے نہ کہ مذہب جو کہ چند رسوم اور پوجا پاٹ کا نام ہوتا ہے جس میں صرف فرد ذاتی نجات کے مذہبی فرایٔض ادا کرتا چلا جاتا ہے۔ اکثر یہ کہا جاتا ہے کہ جب حضورۖ نے کفارِ مکہ کو دینِ حق کی دعوت دینا شروع کی تو انہوں  نے آپ ۖ کی زبردست مخالفت شروع کردی کیونکہ آپ ۖ انہیں بُتوں کی پوجا سے منع کرتے  تھے لیکن بات صرف بتوں کی پوجا کی مخالفت کی نہیں تھی بلکہ کفارِ مکہ جانتے تھے کہ یہ ایک پیغامِ انقلاب ہے جو اُن کے سرمایہ دارانہ اور استحصالی  نظام کی جڑ کاٹ کے رکھ دے گا۔ اس کا نقشہ علامہ اقبال نے یوں کھینچا ہے کہ ابو جہل غلافِ کعبہ کو پکڑ بتوں سے فریاد کر رہا ہے کہ اس سے  بڑا اور کیا انقلاب ہو گا کہ محمدۖ یہ کہ رہا ہے کہ آقا اور غلام انسان ہونے کی حیثیت سے برابر ہیں۔ یہ دین کا مختصر تعارف تھا اور یہی و جہ ہے کہ اسلام ایک نظامِ زندگی ہے ۔خدا کے دین اور نظام کے مقابل کسی اور کی پیروی کو وہ شرک قرار دیتا ہے اس کی قرآنِ پاک میں بہت سے مقامات پر وضاحت  کر دی گیٔ ہے لیکن شرک کے گناہِ عظیم ہونے کے باوجود رب العالمین ہر انسان کو مذہبی آزادی اور اُس کے مذہب کے احترام کا درس دیتا  ہے۔ کتاب اللہ میں متعدد جگہوں پر مذہبی آزادی کی ضمانت دی گیٔ ہے خصوصاَ قرآنِ حکیم میں ٢٢٥٦ ،  ٩٦،  ١٠٩٩،  ٦١٩  اور  ١٨٢٩  میں اس کی وضاحت کر دی ہے۔ مذہب  اختیار کرنے اور اس پر عمل کرنے کی آزادی دینے کے ساتھ ساتھ دوسروں کے مذاہب  کے احترام کا بھی حکم دیا ہے چناچہ سورہ  الانعام کی آیت ١٠٨ میں حکم ہے کہ دوسروں کے جھوٹے معبودوں کو گالی نہ دو۔ اِن و اضح تعلیمات  کے باوجود بعض اوقات کچھ جذباتی عناصر کی طرف سے ایسے اقدامات سر زد ہو جاتے ہیں جو دینِ اسلام کے پیغام کے سرا سر منافی ہوتے  ہیں۔ حضور سرور ِ  عالم ۖ  کی  ذات ِ   بابرکات  اور  قرآن ِ  حکیم  کی   ہر  مسلمان  چاہے  وہ  اسلامی  تعلیمات  پر  عمل  پیرا  نہ  بھی  ہو  مگر  عقیدت  و  محبت  کے  جذبات  بدرجہ  اتم  موجود  ہوتے  ہیں۔   یہ  ہوں  بھی  کیوں  نہ  جب  آپ ۖ  کی  ذات ِ  پاک  سے  محبت  اور  قرآن ِ  مجید  پر  دل  کی  گہراییٔوں  ایمان  ایک  مسلمان  کی  متاع  عزیز  اور  سرمایہ  افتخار  ہوتا  ہے۔  ایک  عام  مسلمان  بھی  اگرچہ   وہ  قرآن  مجید  کی  تعلیمات  کا  ادراک    ہی  نہ  رکھتا  ہو  اور  اس  پر عمل  پیرا  بھی  نہ  ہو  مگر  جب  کبھی  بھی  قرآن  پاک  کی  توہین  کا  کو ئی  واقعہ  رونما  ہوتا  ہے  تو  جذباتی  ہو  کر  بھر  پور  اپنے  رد ِ  عمل  کا  اظہار  کرتا  ہے۔  بعض  اوقات   یہی  جذبات  ہوش  و  خرد  کو  بالائے  طاق  رکھ  کر  ایسے  اقدامات  کرتے  ہیں  جو  قرآن  کی  اپنی  تعلیمات  کے  سرا  سر  منافی  ہیں۔   قرآن ِ  حکیم  میں  اللہ  تعالیٰ  کا  ارشاد  ہے  کہ  جب  کوئی  خبر  تم  تک  پہنچے  تو  پہلے  تحقیق  کر  لیا  کرو  یہ  نہ  ہو  کہ  تم  نادانی  میں  کسی  کو  نقصان  پہنچا  د و  اور   بعد  میں  پچھتاتے  رہ  جائو  (  ٦ ٤٩)۔   قرآنِ  حکیم  تمام  انسانوں  کو  واجب  التکریم  اور  قابلِ  عزت  قرار  دیتا  ہے چناچہ  سورہ  بنی  اسرائیل  کی  آیت  ٧٠  میں  ہے  لقد کرمنا  بنی  آدم  یعنی  اللہ  نے  تمام  اولادِ  آدم  کو  محترم  پیدا  کیا  ہے۔ پھر  چار  مختلف  سورتوں  ( ٤١،  ٦٩٨،  ٧١٨٩  اور  ٣٩٦)  میں  یہ  واضح  طور  پر  کہا  کہ  تمام  انسانوں  کو   خالقِ  کائنات  نے  نفسِ  واحدہ  سے  پیدا  کیا  ہے۔  پرور دگارِ عالم  تمام  انسانوں  کو  اپنی  تخلیق  قراردیتے  ہوئے  انہیں  قابلِ احترام  ٹھہراتا  ہے۔ وہ  تمام  انسانی  جانوں  کو  یکساں  عزت  کا  مقام  دیتا  ہے۔   اللہ  تعالٰی  بغیر  کسی  رنگ  و  نسل  اور  مذہب  کی  تفریق  کے  ہر  انسانی  جان  کو  ایک  جیسا  اور  برابر  گردانتا  ہے۔ سورہ  الما ئدہ  کی  آیت  ٣٢  میں  ہے  جس  نے  کسی  ایک  جان  کو  نا حق  قتل  کیا  گویا  اس  نے  پوری  نوعِ  انسانی  کو  قتل  کر دیا  اور  جس  نے  کسی  ایک  انسان  کی  بھی  جان  بچائی  تو  اُس  نے  پوری  انسانیت  کو  زندگی  بخش  دی۔  یعنی  انسان  ہونے کی  جہت سے  تمام  انسان  یکساں  عزت  اور  احترام  کے  لایٔق  ہیں۔  اور کسی  ایک انسان کا  نا حق  قتل  پوری  نوعِ  انساں  کے  قتل  کے مترادف  ہے۔  انسان  ہونے  کی  عظمت  دینے  کے ساتھ   وہ  زندگی  اپنی  مرضی  سے  گذارنے  کی  مکمل  آزادی  دیتا  ہے۔  جہاں  سورہ  البقرہ  (  ٢٢٥٦)   میں  یہ  اعلان  فر ما دیا  کہ  لا اکراہ فی الدین  یعنی  مذہب، دین اور  نظامِ  زندگی  اختیار  کرنے  میں  کسی  پر  کو ئی دباؤ  اور  جبر  نہی  ہے۔  صرف اتنا  ہی  نہیں  بلکہ  جو  بھی  مذہب  اور  دین  کے  معاملہ  میں  زبردستی  کریں  قرآن  اُن  کے ساتھ  جنگ کرنے  کا  حکم  دیتا  ہے  یہاں  تک کہ وہ  زبردستی  کرنا  چھوڑ دیں  او ر  دین کا  معاملہ  صرف  اللہ  کے  لیٔے  رہ  جاے ٔ  (٢١٩٣،  ٨٣٩،  ٢٢٤٠)  ۔  جو  کوئی اسلام  لانے  بعد  اسے  چھوڑ  بھی  دے  اس کے  بارے  صرف  یہ  کہا  کہ  جو  دین  سے  پھِر جاے ٔ  یعنی  مرتد ہو جاے ٔ  ا ور  حالتِ  کُفر میںہی  مر  جاے ٔ  تو  اُس  کے  اعمال  ضا  یٔع  ہو  جا  ٔیں  گے  اور  و ہ  لوگ  ہمیشہ  جہنم  میں  رہیں  گے  ( ٢٢١٧)،  یہ نہیں کہا کہ اگر کوئی دین  یا  مذہب  تبدیل  کرے تو اُسے قتل کردو ۔   سورہ  الحج  کی آیت  ٤٠  میں  وہ  امتِ مسلمہ  کا  فریضہ  قرار  دیتا  ہے  کہ  وہ  اس  بات  کا  انتظام  کریں  کہ  دوسروں  کی  عبادت  گاہیں ،  گرجے ، یہودیوں  کے  معبد  اور  مسجدوں  کا  تحفظ  کریں۔  قرآنِ  حکیم  کی  اس  قدر  واضع  تعلیمات  کے  باوجود  اُس  کے پیروکار  جب  مذہب  کے  نام  پر  ایک  دوسرے  کو  قتل  کریں،  عبادت گاہیں  دہشت گردی  کا  نشانہ  بنیں،  دوسرے مذاہب  کے  لوگوں  کو  نشانہ  بنا ئیں  تو  یہ  قرآن  کے  خلاف  طرزِ  عمل  ہو گا۔ مؤمن  کا  معنی  ہی  امن  کی  ضمانت  دینے  والا  ہے  یعنی  وہ  جو  امنِ  عالم  کی  ضامن  ہو،  جس  پر  بھروسہ  کر  کے  سب  بے  فکر  ہو  جا  ٔیں  اور  سلامتی  کا  علمبردار  ہو۔  مگر  یہ  کیسے  مومٔن  ہیں  جو  دوسروں  کے لیۓ  پیغامِ  اجل  بن  رہے  ہیں۔  جن  سے  دوسروں  کی  جان و مال  اور  عبادت گاہیں   محفوظ  نہیں۔  کیا  یہ  اُس  خداے ٔ  واحد  کی  تعلیمات  کے  منافی  نہیں  جو  اپنے  آپ  کو  المومٔن  (٢٣٥٩)  کہتا  ہے  یعنی  پوری  کا یٔنات  کا  محافظ  کہتا ہے  اور  جس  نے    پیغمبرِ آخر الزمانۖ  کو  پوری  دنیا  کے  رحمت  بنا کر  مبعوث  کیا۔  وہ  خدا  جو  امن و  سلامتی  کا  ضامن  ہے  اور  اُس  کے  بندے  اس  زمین   پر  اس  کے  علمبردار  ہیں۔  لہذا  مسلمان  ہونے  کے  دعوٰی  داروں  کو  انہی   تعلیمات  کا  عملی  پیکر  بننا  ہو  گا۔ اگر  کسی  جگہ  کوئی  جرم  سر  زد  ہوتا  ہے  تو  یہ  ملک  کے  قانون  نافذ  کرنے  والے  اداروں  اور  عدالتوں  کا  کام ہے  کہ  وہ  اس  کا  فیصلہ  کریں  نہ  کہ  ہر  شخص  اُٹھ  کر  خود  ہی   پولیس  اور  قاضی   بن جاے ٔ ۔  یہ  نظامِ  مملکت  کی  ذمہ  داری  ہے ،  کسی  فرد  یا  جماعت  کو  کوئی حق  حاصل  نہیں  کہ  وہ  لٹھ  لے  کر  ایک  متوازی   نظام  وضع  کرے۔  دورِ  رسالت ۖ  اور  خلفا  ٔ  راشدین  کے  دور  میں  کسی  نے  بھی  ذاتی  طور  پر  سزا  و  جزا  کا  کام  نہیں  کیا  تھا  بلکہ  نظامِ  مملکت  یہ  فریضہ  سر  انجام  دیتا  تھا۔  لہذا  یہ  شعور  بیدار  کرنے  کی  ضرورت  ہے۔  دینی  و  مذہبی  جماعتوں،  علمأ  و  دانشوروں ،  ادیبوں  و  صحافیوں،  کالم  نگاروں  اور  معاشرے  کے  دوسرے  باشعور  افراد  پر ذمہ  داری  عایٔد  ہوتی  ہے  کہ  وہ  صداے ٔ  حریت  بلند  کریں  اور  قوم  کی  درسُت  سمت  میں  رہنمائی کریں۔  جذباتی  طرزِ  عمل  کی  بجاے ٔ  ہوش و  خرد  سے  کام  لینے  کی  تلقین  کریں۔ اس  طرح  کے  واقعات  جہاں  ایک  طرف  دینِ حق  کی  تعلیمات  کے منافی  ہیں  وہاں  یہ  دنیا  بھر  میں  ہماری  بد نامی  کا  باعث  بن رہے  ہیں۔  ہمیں  اُس  وقت  تک  جدوجہد  کرنی  ہو گی  جب تک  ہر شخص  کو  عزتِ  نفس  حاصل  نہ  ہو  جاے ٔ  اور  زندگی  کسی  کے  لیۓ  جُرم  نہ  ہو  اور  حیات  کسی کے لیۓ  بھی  وبال  نہ  ہو۔

 

29 Aug 2012

Comments powered by Disqus

Afkare Taza: Urdu Columns and Articles (Urdu Edition)

This website was built using N.nu - try it yourself for free.(info & kontakt)